بزم تکبیر کا جاوید اختر جاوید کے اعزاز میں افطار ڈنر

Iftar Party

Iftar Party

سعودی عرب (ڈاکٹر محمد ریاض چوھدری) ڈاکٹر سعید احمد جٹ کا پاک ہاؤس رسٹورنٹ (پنج تارہ ہوٹل) آج کل ادبی اور ثقافتی سرگرمیوں اور فکرونظر کی شوخیوں کا مرکز بنا ہوا ہے۔ گذشتہ روز بزم تکبیر ریاض کے صدر ڈاکٹر محمود احمد باجوہ نے پنج ستارہ پاک ھاؤس ہوٹل میں معروف شاعر اور قلم کار جاوید اختر جاوید کے اعزاز میں افطار ڈنر کا اہتمام کیا۔

صدارت معمود احمد باجوہ نے کی جبکہ جاوید اختر جاوید مہمان خصوصی تھے۔پروگرام کی ابتدا تلاوت قرآن پاک سے ہوئی عبدالرزاق تبسم نے نعترسول پیش کی۔اور سوزو سازرومیاورپیچوتابکارازی کا مظاہرہ کیا۔ ڈاکٹر محموداحمد باجوہ نے صاحب طرز شاعر جاوید اختر جاوید کے فکرو فن پر روشنی ڈالی۔

بزم تکبیر کے جنرل سیکریٹری امین تاجر نے جاوید اختر جاوید کے شب و روز کا تذکرہ کرتے ہوئے زبردست خراج تحسین پیش کیا ۔ حلقہ فکروفن کے مرکزی صدر ڈاکٹر محمد ریاض چوھدری نے کہا کہ شاعری جب انسانی دماغ پر دستک دیتی ہے تو تخلیق کے پردہ میں فن کو فروغ ملتا ہے ۔ شاعری جذبات کی ترجمانی کرتی ہے یہ خیال کی منظر کشی اور جذبات کی تصویر کشی کرتی ہے۔

مہمان خصوصی جاوید اختر جاوید نے کہا کہ سعودی عرب میں ادبی محافل اور تہذیبی سرگرمیاں اپنے عروج پر ہیں اور یہ محافل روایتی انداز میں منعقد ہوتی آرہی ہیں ۔ جب کوئی ادبی شخصیت یہاں پر آتی ہے تو اس کے اعزاز میں مشاعرے اور ادبی محافل کا انعقاد ہوتا ہے اور یہ اردو کے فروغ میں ممد اور معاون بنتی ہیں۔

پروگرام کی جسمیں شہر کیممتاز شخصیات نے شرکت کی۔ ڈاکٹر سعید احمد جٹ اور عبدالرزاق تبسم نے اپنے سوز و ساز محفل کو گرما دیا خاص طور پر نیلمادرانیکیاسمعروفغزل “کوئیتو سیکھے” پی۔ کرکے محفل کیرونقکو دوبالا کر دیا۔ اور پھر پنجابی کے “جہڑالٹکے لے گیاجندڑیجوں۔ فیراوہپرونا نہیں آیا ” پی۔کر کے سماں باندھدیا۔

آخر میں دعا پر اس محفل کا اختتام ہوا پاک ہاؤس ریسٹورنٹ کی انتظامیہ کی تعریف کی گئی کہ انہوں نے نہایت قلیل عرصہ میں اپنی محنت، لگن اور جدوجہد سے شہر کے بہترین ہوٹلوں میں
سرفہرست لےآئے۔