کہکشاں کلچرل اینڈ لٹریری سوسائٹی نظام آباد کا ایک روزہ قومی سمینار

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

نظام آباد (ڈاکٹر عزیز سہیل ) ضلع نظام آباداردو ادب کے فروغ و اشاعت کیلئے تلنگانہ میںکافی ذرخیز علاقہ تصو ر کیا جاتا ہے جہاں اسکول ، کالج اور یونیورسٹی کی سطح پر اردو ذریعہ تعلیم کا نظم ہے سیکڑوں طلباء و طالبات اپنی مادری زبان میں تعلیم حاصل کرتے ہوئے ترقی کی منزلیں طئے کررہے ہیں یہاں اردو زبان و ادب کے فروغ میں بہت سی انجمنیں اور سوسائٹیز اپنی گراں قد رخدمات انجام دئے رہی ہیں ان اداروں میں ایک باوقار ادارہ کہکشاںکلچرل اینڈ لٹریری سوسائٹی بھی ہے جس نے اردو کے فروغ اور اسکی ترقی و ترویج کے لئے خودکو وقف کردیاہے۔کہکشاںکلچرل اینڈ لٹریری سوسائٹی نظام آبادکی ایک رجسٹرڈ سوسائٹی ہے جس کا قیام آج سے 22سال قبل عمل میں آیاتھاتب سے لیکر آج تک سوسائٹی کے زیر اہتمام بے شمار کل ہند مشاعرے،بین الریاستی مشاعرے ،ادبی اجلاس اور ،سمینار کا انعقاد عمل میں لایا جاتا رہا ہے،سوسائٹی نے 90سے زائد نئے شعراء کو اپنے پلیٹ فارم سے متعارف کروایا ہے۔ڈاکٹر ضامن علی حسرت ممتاز ادیب و شاعرہونے کے ساتھ ساتھ اس سوسائٹی کے کامیاب کنوینر بھی ہیں ان ہی کی کاؤشوںکی بدولت اس ایک روزہ قومی سمینار کا انعقاد عمل میںآیا۔

کہکشاںکلچرل اینڈ لٹریری سوسائٹی (رجسٹرڈ) نظام آبادنے قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان نئی دہلی کے اشتراک سے 4جون بروز ہفتہ 2016ء صبح 11بجیتا5بجے دن نیو پریسڈنٹ پلازہ فنکش ہال بودھن روڈ نظام آباد پرایک خوبصورت سمینار بعنوان ”مولا نا حالی کی ناقابل فراموش ادبی خدمات ” کا انعقاد عمل میں لایا،نظام آباد شہر میں اپنی نوعیت کے اس منفرد سمینار کا آغاز بین الاقوامی شہرت یافتہ قاری ڈاکٹرمحمد نصیرالدین المنشاوی کی تلاو ت کلام پاک سے عمل میں آیا۔ قاری صاحب نے بڑے ہی اطمنان اور خوش الہانی سے کلام مجید کی آیات کی تلاوت سے ایک بہترین سماع باندھ دیا۔ سمینار کی نظامت کی ذمہ داری قومی سطح پر مقبول شاعر جناب فیروز رشید نانڈیڑ کے حوالے کی گئی تھیں۔ہم نے اب تک فیروز صاحب کوکل ہند مشاعروں کی کامیاب نظامت کرتے ہوئے دیکھا تھا ۔پہلی مرتبہ سمینار میں بہت ہی اچھے اندازمیں ،بہترین اشعار، اور نت نئے الفاظ سے انہوں نے نظامت کے فرائض انجام دئے اور ناظم سمینار، محرک سمینار، معتمد کہکشاںکلچرل اینڈ لٹریری سوسائٹی نظام آبادڈاکٹر ضامن علی حسرت کو ابتدائی کلمات کیلئے دعوت دی۔ ڈاکٹر ضامن علی حسرت نے استقبالیہ خطاب میں سمینار کے انعقادکے مقاصد پر روشنی ڈالی اورسمینار کے عنوان سے متعلق تفصیلا ت پیش کی اور مہمانوں،میزبانوںو سامعین کا استقبال کیا۔

سوسائٹی کی جانب سے مہمانوں کو تہنیت پیش کی گئی، سوسائٹی کے ذمہ داروں نے ،پروفیسر نسیم الدین فریس،ڈاکٹر سید فضل اللہ مکرم،ڈاکٹر شجاع کامل(نانڈیڑ)،جناب زاہد علی ایڈکیٹ کو تہنیت پیش کی۔فیروز رشید نے کلید ی خطبہ کیلئے حیدرآباد سے تشریف لائے ہوئے مہمان جناب ڈاکٹر سید فضل اللہ مکرم چیرمین بورڈ آف اسٹڈیس اورینٹل اردو عثمانیہ یو نیورسٹی حیدرآباد کو دعوت دی انہوں نے اپنے خطاب میںکہا کہ خواجہ الطاف حسین حالی اُردو کے مشہور شاعر’ سوانح نگار’ اور نقادتھے’ وہ سرسید کی اصلاحی تحریک سے بہت زیادمثاثر تھے۔انہوں نے نواب مصطفی خان شیفتہ کی شاگردی اختیار کی ان کی مصاحبت میں رہے ۔ ابتداء میں انہوں نے اپنا فارسی اور اردو کلام مومن خان کو دکھایا تھا مگر ان کے وفات پا جانے کے بعد وہ مرزا غالب سے مشورہ سخن کرنے لگے ۔انہوں نے سر سید احمد خان کی فرمائش پر 1879ء میں مشہور نظم ”مسدس مدوجزر اسلام” لکھی۔ اس نظم کی تعریف کرتے ہوئے۔ سرسید نے کہا تھا کہ ”اگر خدا مجھ سے پوچھے کہ کیالائے ہو تو میں کہوں گا کہ حالی سے مسدس لکھوالایا ہوں۔ ” حالی نے نثر میں تین سوانحی کتابیں لکھیں۔ ”حیات سعدی” ”یاد گار غالب”اور حیات جاوید حیاتِ جاوید سرسید کی سوانح ہے۔

ان سوانحی کتابوں سے حالی نے سوانح نگاری کو فروغ دیا۔ محمد حسین آزاد کے ساتھ مل کر حالی نے انجمن پنجاب لاہور میں جدید مشاعروں کا آغاز کیا۔ جس میں دئے گئے موضوعات پر نظمیں سنائی جاتی تھیں۔ حالی نے اپنے دیوان کو ایک طویل مقدمے کیساتھ شائع کیا۔ جس میں اُردو شاعری اور اُس کی اصناف میں اصلاح کی بات پیش کیں۔ لیکن ان کے دیوان سے زیادہ یوان کے مقدمہ کو مقبولیت حاصل ہوئی ۔ان کے دیوان کا یہ مقدمہ ایک الگ کتاب کی شکل میں 1893ء میں ”مقدمہ شعر و شاعری” کے عنوان سے شائع ہوا۔ اس کتاب میں حالی نے جو تنقیدی خیالات پیش کئے۔ اس سے وہ جدید اُردو تنقید کے بانی قرار پائے۔ حالی نے اُردوادب میں نظم نگاری ‘ سوانح نگاری’ اور تنقیدنگاری کو فروغ دیا۔ عورتوں کی تعلیم کیلئے انہوں نے کتاب ”مجالس النسائ” تحریر کی ،انہوں نے نسل نوکو پیغام دیا کہ وہ حالی کو اپنارول ماڈل بنائیں۔

افتتاحی اجلاس کی صدرات پروفیسر نسیم الدین فریس، صدر شعبہ اردو مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی حیدرآبا دنے کی انہوں نے اپنے خطاب میں حالی کی مجموعی ادبی خدمات کا تفصیلی جائزہ لیااور کہاکہ خواجہ الطاف حسین حالی نے اردو ادب میں نئے افکار پیش کئے جس کی وجہ سے اردو ادب میں صحت مند تبدیلیاں آئیں۔ حالی وہ پہلے شخص ہیں جنہوں نے اپنے نظریہ ادب برائے زندگی کے ذریعے حقیقت نگاری کو ادب میں پیش کیا ۔ وہ جدید اردو تنقید کے بانی تصور کئے جاتے ہیں۔”مقدمہ شعر و شاعری” حالی کی مشہور تصنیف ہے جس میں حالی نے شعر اور شاعری کی تعریف ‘شاعری اور سوسائٹی کا تعلق اور اردو کی شعری اصناف غزل’مثنوی’قصیدہ’مرثیہ اور رباعی کے فن پر بحث کی اور ان میں صحت مند تبدیلیوں کی تجاویز پیش کیں یادگار غالب، غالب کی شخصیت اور شاعری کو سمجھنے کے سلسلہ میں پہلی اور اچھی کوشش ہے یادگار غالب کا شمار اردو ادب کی ہمیشہ زندہ رہنے والی تصانیف میں ہوتا ہے انہوں نے اپنے بصیرت افروز خطاب میں حالی کی ناقابل فراموش خدمات کو اردو ادب پر احسان عظیم قراردیا ۔ان کی زندگی کے مختلف پہلوؤں پر روشنی ڈالی۔مہمان خصوصی کے طور پر ڈاکٹر شجاع کامل صدر شعبہ اردو سری رام نند تیرتھ یونیورسٹی نانڈیڑ ، جناب ڈاکٹر محسن جلگانوی ممتاز شاعر،ادیب اور دانشور ،نذیر احمد صدر شعبہ اردو ویمنس کالج عثمانیہ یونیورسٹی حیدرآ بادنے شرکت کی۔

افتتاحی سیشن کا اختتام جناب زاہد علی ایڈوکیٹ سرپر ست اعلی کہکشاںکہکشاںکلچرل اینڈ لٹریری سوسائٹی نظام آبادکے شکریہ پر عمل میں آیا۔طعام و ضیافت خاص کے بعد سمینار کے دوسرے اور تیسرے سیشن کا آغاز عمل میں آیا جس کی صدارت ڈاکٹر شجاع کامل صدر شعبہ اردو سری رام نند تیرتھ یونیورسٹی نانڈیڑ اور جناب ڈاکٹر محسن جلگانوی ممتاز شاعر،ادیب اور دانشور نے فرمائی۔ اس اجلاس میں سب سے پہلے قاری ڈاکٹرمحمد نصیرالدین المنشاوی حیدرآباد نے ”خواجہ الطاف حسین حالی کی نظم چپ کی داد کا تجزیاتی مطالعہ”کے عنوان سے اپنامقالہ پیش کیا ،دوسرا مقالہ ڈاکٹر ضامن علی حسرت نے” اردوادب کی عہد ساز شخصیت مولانا الطاف حالی ”،کے موضوع پرپڑھا ،تیسرا مقالہ نذیر احمد صدرشعبہ اردو ویمنس کالج عثمانیہ یونیورسٹی حیدرآ بادنے”حالی کی نظم نگاری” پراپنامقالہ پیش کیا۔ان کے بعد ڈاکٹر عبدالقوی اسسٹنٹ پروفیسر تلنگانہ یونیورسٹی نے ”الطاف حسین حالی کے تنقیدی تصورات ”کے عنوان پرمقالہ پڑھا،ڈاکٹر محمد عبدالعزیز سہیل لیکچرار ایم وی ایس گورنمنٹ ڈگری کالج محبوب نگر نے ”خواجہ الطاف حسین حالی بہ حیثیت سوانح نگار” پراپنا مقالہ پیش کیا ۔ان کے بعد ڈاکٹر عبد القدیر عادل آباد نے ”مولانا الطاف حسین حالی کی دیرینہ ادبی خدمات ،نظموں کے تناظر میں” پر اپنا مقالہ پڑھا،ان کے بعد محمد عبدالبصیر لیکچرار تلنگانہ ریسڈینشل کالج ناگا رام نے ”الطاف حسین حالی اور مقدمہ شعر و شاعری”کے عنوان پر اپنا مقالہ پیش کیا، ڈاکٹرسید حامد نے اپنا مقالہ” اردو شعر و ادب کے دو اہم ستون حالی اور غالب ”کے عنوان پرپڑھا،محمد وسیم نے ”الطاف حسین حالی کی فارسی سوانح نگاری” پر اپنا مقالہ پیش کیا۔ڈاکٹر ابرار الباقی ستاواہنا یونیورسٹی کریم نگر نے بھی اپنا مقالہ روانہ کیا۔ صدارتی کلمات میں شجا ع کامل نے تمام مقالہ نگاروں کو مبارکباد پیش کی اور حالی کی ادبی خدمات پر سرسری جائزہ پیش کیا ،اور کہا کہ خواجہ الطاف حسین حالی کی نظمیہ شاعری اصلاحی،اخلاقی اور مقصدی غیر معمولی معنویت و اہمیت کی حامل ہے اصلاحی،اخلاقی،افادی اور مقصدی شاعری نے انیسویں صدی کی آخری دہائیوں میں بہت بڑا مصلحانہ انقلاب آفریں کردار ادا کیا ہے۔

انھوں نے اْس دور سے قبل تک کی نام نہاد روایتی نظمیہ شاعری کے پس منظر اور پیش منظر کو یکسر بدل کر رکھ دیا ہے۔ انھوں نے سرسید کی اصلاحی تحریک کے زیر اثر اپنی غیر معمولی فکری اور فنّی شعور و آگہی سے اْردو شاعری کو زندگی کا فنّی ترجمان بنا دیا۔۔ ڈاکٹر محسن جلگانوی نے اپنے صدرات خطاب میں حالی کی زندگی کے مختلف گوشوں پر روشنی ڈالی اور پڑھے گئے مقالوں کا جائز لیااور کہا کہ لطاف حسین حالی خداداد صلاحیتوں کے حامل نہایت خلیق ،با وقار ،ملنسار ، حلیم الطبع ،سلیم الفطر ت اور سچے فدائی قوم تھے۔ دنیوی جا ہ و جلال اور دولت و ثروت انکی دلی پسند نہ تھی۔ تصنیف و تالیف انکی فطرت ثانیہ ہے۔انسانی حمدردی انکا زیور حیات تھا۔ فرقہ وارانہ اختلافات اور آپسی نزاعات سے کنا رہ کشی انکا طرہ امتیاز تھا۔

انکا مطمح نظر بہت بلند اور انکا عزم و حوصلہ بڑا ارفع تھا۔۔سمینار کے آخری سیشن میں مقالہ نگاروں میںاسناد کی تقسیم پروفیسر نسیم الدین فریس اور ڈاکٹر سید فضل اللہ مکرم کے ہاتھوںعمل میں آئی ، اس بامقصدی سمینار کا اختتام ڈاکٹر ضامن علی حسرت معتمد کہکشاں کہکشاںکلچرل اینڈ لٹریری سوسائٹی نظام آباد کے شکریہ پر ہوا۔دیگر معزز مہمانان میں سید مجیب علی،ڈاکٹر ناظم علی و دیگراحباب شامل تھے۔سوسائٹی کہ ذمہ داران محمد سمیع اللہ،سید حقانی ،سیدممتاز علی،محمد فصیح الدین نے انتظامی امور انجام دئے۔اس سمینار میںفیس بک گروپ” ہماری بیاض ” میں شاعری کے مقابلہ میں جناب رضی الدین اسلم کو انعام اول حاصل کرنے پر اڈمین گروپ ڈاکٹر سید فضل اللہ مکرم نے جناب زاہد علی ایڈوکیٹ اور ڈاکٹر ضامن علی حسرت کے ہاتھوں انعام دلوایا۔شہر کے معزز شعراء اور اہل علم حضرات نے شرکت کرتے ہوئے قومی سمینار کو زبردست کامیابی سے ہمکنار کیا۔

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar

Kakhkashan Cultural Literary Society Nizamabad National Seminar