بزم غزل کے زیر اہتمام ایک شام ایم آر چشتی کے نام

M R Chishti

M R Chishti

دربھنگہ: واٹس ایپ گروپ بزم غزل کی طرف سے بہار گیت کے خالق معروف شاعر ایم آر چشتی کے اعزاز میں ایک خصوصی محفل آراستہ کی گئی۔ دنیا بھر سے ناظرین و سامعین اس خصوصی محفل میں شریک ہوئے اور اپنے محبوب شاعر کے کلام سے محظوظ ہوئے۔آغاز میں مہمان شاعر ایم آر چشتی نے اپنے خاندانی اور ادبی پس منظرپر روشنی ڈالی۔

اس موقع پر ہندوستان سے پروفیسر اسرائیل رضا، پروفیسر عبد الحنان سبحانی،اشرف یعقوبی، ڈاکٹر منصور خوشتر،اصغر شمیم، جمیل اختر شفیق، نصر بلخی، کامران غنی صبا، انجمن اختر، انعام عازمی، ابو ریحان، انو راگ سنگھ رشی، حبیب مرشد خان، قطر سے احمد اشفاق، سعودی عرب سے منصور قاسمی، نور جمشید پوری،بحرین سے رخسار ناظم آبادی سمیت کثیر تعداد میں ناظرین و سامعین موجود تھے۔شرکائے بزم نے ”بزم غزل” کی اس انوکھی پہل کا خیر مقدم کیا۔ اس خصوصی محفل میں ایم آر چشتی کے پیش کردہ کلام کا منتخب حصہ قارئین کی نذر کیا جا رہا ہے۔

دل کو پھر درد سے آباد کیا ہے میں نے
مدتوں بعد تجھے یاد کیا ہے میں نے
۔۔۔۔۔
میں تجھے بھول بھی جائوں تو مجھے کیا حاصل
تو نہ ہوگا تو کوئی اور رلائے گا مجھے
۔۔۔۔۔
آم کی ڈال پہ بیٹھے ہوئی تنہا کوئل
جانے کیوں لگتی ہے دنیا سے خفا آج کی رات
۔۔۔۔
روح چلاتی رہی جسم کے اندر لیکن
ایسا بچھڑا کے پلٹ کر نہیں آیا کوئی
۔۔۔۔۔۔
ہوسٹل میں رہتا ہے جب سے لاڈلا میرا
وہ ہر اک پرندے کو گائوں کا سمجھتا ہے
۔۔۔۔۔
جب میں پہلی بار جگا تھا
پہلے تیرا نام لیا تھا
دھوپ چٹائی پر لیٹی تھی
اور سمندر کھانس رہا تھا
۔۔۔۔
یہ بھی ہے سچ وہ ہے مرے وہم و گماں سے دور
یہ بھی ہے سچ کہ اس کو جدا بھی نہ کرسکا