مقبوضہ کشمیر کی بگھڑتی صورتحال کے تناظر میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلاس بلوائے۔ علی رضا سید

Ali Raza Syed

Ali Raza Syed

پیرس (زاہد مصطفی اعوان سے) کشمیر کونسل یورپ (ای یو) کے چیئرمین علی رضا سید نے حکومت پاکستان سے کہا ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر کی بگھڑتی ہوئی صورتحال کے تناظر میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلاس بلوائے۔

برسلز سے جاری ہونے والے اپنے ایک بیان میں انھوں نے کہا کہ پاکستان کے لیے ایک اہم موقع ہے کہ وہ آج بھارتی مظالم کو دنیاکے سامنے پیش کرے۔ خاص طور پر بے گناہ اور پرامن کشمیریوں پر بھارتی فوجیوں کے حملوں کے نتیجے میں گذشتہ سات ہفتوں کے دوران ایک سو سے زائد شہید اور چارسو سے زائد لوگ پیلٹ گن کی فائرنگ سے اپنی آنکھوں سے محرو م ہو چکے ہیں۔ یہ ایک بڑا انسانی المیہ ہے جسے اٹھانا بے حد ضروری ہے۔

انھوں نے کہا کہ حکومت پاکستان کو چاہیے کہ اس صورتحال کو اجاگر کرنے کے لیے ایک وسیع سفارتی مہم شروع کر ے کیونکہ مقبوضہ کشمیر میں پہلے ہی سات لاکھ بھارتی فوجی تعینات ہیں اور نئی دہلی مزید فوج تعینات کر رہی ہے۔ انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں جنگی جرائم کے زمرے میں آتی ہیں اور نہ صرف اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں یہ مسئلہ اٹھنا چاہیے بلکہ ان جرائم کی فہرست عالمی عدالت انصاف میں پیش کی جائے تاکہ ان جرائم میں ملوث بھارتی فورسز کے خلا ف مقدمات قائم ہوسکیں۔

مسئلہ کشمیربیرونی دنیامیں اٹھانے کے لیے پاکستان کی طرف سے مجوزہ پارلمانی وفود کی تشکیل کے بارے میں علی رضاسید نے کہاکہ اگرچہ مسئلہ کشمیرکے حوالے سے پاکستان کی پارلیمنٹ کے وفود باہرروانہ کرناایک اچھااقدام ہے لیکن یہ ضروری ہے کہ مسئلہ کشمیرکے ماہرین اور دانشوروں کے وفود باہرروانہ کئے جائیں تاکہ صحیح معنوں میں دلائل کے ساتھ مسئلہ کشمیر اجاگر ہو سکے اور موثر طریقے سے بھارتی مظالم سے پردہ اٹھایا جائے۔

کشمیریوں سے مشورہ اور انہیں ان وفود میں شامل کرنااشد ضروری ہے، خاص طور پر آزاد کشمیر کی قانون ساز اسمبلی کے اراکین کوان پارلمانی وفود میں شامل کیا جائے کیونکہ کشمیری ہی اپنے حقوق کو درست طریقے سے اجاگر کرسکتے ہیں اور مقدمہ کشمیر کو دنیاکے سامنے پیش کر سکتے ہیں۔

چیئرمین کشمیرکونسل ای یونے اپنے بیان میں بتایاکہ کشمیریوں کی حکومت پاکستان سے بہت توقعات ہیں اور اس امر کی ضرورت ہے کہ خودارادیت کے حصول میں اسلام آباد ان کی زیادہ سے زیادہ مدد کرے۔ واضح رہے کہ کشمیر کونسل ای یو نے پہلے ہی مسئلہ کشمیر پر ایک سفارتی مہم شروع کی ہوئی جسے حالیہ دنوں تیز تر کر دیا گیا ہے۔

کونسل گذشتہ دنوں کے دوران مسئلہ کشمیر خصوصاً مقبوضہ کشمیرکی صورتحال کے بارے میں اقوام متحدہ ، یورپی یونین اور اہم ملکوں کے اعلیٰ حکام کو خطوط لکھ چکی ہے جن میں ان اداروں اور عالمی طاقتوں سے کشمیرخاص طورپر مقبوضہ کشمیرمیں معصوم لوگوں کے خلاف پیلٹ گن کے استعمال پر خاموشی توڑنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

کشمیرکونسل ای یو یورپ میں کشمیریوں کی حمایت کے لیے کیمپس بھی لگارہی ہے۔ بدھ کے روز تین روزہ کیمپ برسلزمیں یورپی یونین کی وزارت خارجہ کے دفتر کے سامنے لگایاجائے گا۔