قرآن کا فلسفہ حیات کا عملی نمونہ مسلم ممالک کی بجائے مغربی ممالک میں ہے۔ ڈاکٹر حسن عکسری

Rao Khalil

Rao Khalil

پیرس (اے کے راؤ) جارج واشنگٹن یونیورسٹی کے ایرنی النسل پروفیسر ڈاکٹر حسن عسکری کا کہنا ھے کہ قرآن کا فلسفہ حیات کا عملی نمونہ مسلم ممالک کی بجائے مغربی ممالک میں ہے۔

مسلم ممالک قرآنی تعلیمات کی روشنی مین اپنا سیاسی، معاشی، قانونی اور سوشل نظام بنانے میں فیل ہیں۔

پروفیسر ڈاکٹر حسن عسکری انٹرنیشنل افئیر اور انٹرنیشنل بزنس کے پروفیسر ہیں انھون نے معاشیات میں ڈاکٹریٹ کی ھے ، وہ The Seed For Change ،Introduction to Islamic Economics: Globalization and Islamic Finance: Convergence, Islam and the Path to Human and Economic Development اور New Issues in Islamic Finance: Progress and Challenges جیسی کم و بیش 25 کتابوں کے مصنف ہیں۔

ان کی تحقیقات 208 ممالک کی معاشی ترقی اور سوشل ویلیوز کے فیکٹ اینڈ فیگر کی روشنی میں تھیں ان کے مطابق قرآن کا فلسفہ حیات جن ممالک میں اپنی اصلیت کے مطابق قریب ترین نافظ العمل ہے ان ٹاپ 10 ممالک میں نیوزی لینڈ، لیکسمبرگ آئرلینڈ، آئس لینڈ ،فن لینڈ، ڈنمارک، کینڈا، انگلستان ،اسٹریلہ اور ہالینڈ شامل پہیں۔

ان کی تحقیقات کے مطابق اگر قرآن کا فلسئہ حیات کے مطابق پہلے 50 ممالک کو گریڈ آپ کیا جائے تو مسلم ممالک میں سے صرف دو ممالک ملائشیا 33 ویں اور کویت 48 نمبر پر ہیں۔ ان کی تحقیق یہ بھی بتاتی ھے کہ سعودی عرب کا اس سلسلے میں 138 واں نمبر ھے۔

پروفیسر حسن عسکری کا کہنا ہے کہ بہت سے ممالک اسلام کو سٹیٹ کو کنٹرول کرنے کے لیے استعمال کرتے ہیں ۔ ڈاکٹر حسن عسکری مسلم ممالک میں حد سے زیادہ کرپشن اور نا انصافی کو اسلامی قوانین سے متصادم کرار دیتے ہیں۔